عمر بن سعد بن ابی وقاص اور سنی علماء


عمر بن سعد بن ابی وقاص اور سنی علماء

اھل ِسنت کے علماء میں ایک نامور اور معتبر نام امام ذہبی جو عمر ابن سعد کے بارے میں تحریر کرتے ہیں:
ابن سعد نے اُس فوج کی قیادت کی جس نے الحسین کو قتل کیا، مختار انے ابن سعد کو قتل کیا
سیرا علام النبلاء ، ج 4 ص 349
اہلِ سنت کے امام ابن حجر عسقلانی نے اپنی کتاب تھذیب التھذیب میں حدیث کے حوالنے سے عمر ابن سعد کی مذھبی اہمیت بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں:
عمر ابن سعد بن ابی وقاص زہری ابو حفص مدنی کوفہ میں رہے۔ انہوں نے اپنے والد اور سعید الخدری سے روایت کیں ہیں ۔ ان کے بیٹے ابراہیم ، پوتے ابو بکر حفص، ابو اسحاق سبیعی، عزار بن حریث ، یزید بن ابی مریم ، قتادہ ،زہری ، یزید بن حبیب اور دوسروں نے بھی ان سے روایت کی ہیں۔
تھذیب التھذیب ، ج 7 ص 450 ۔ 452
 





جہاں تک اہل ِسنت کی اس بزرگ ہستی کی سچائی کا تعلق ہے، تو امام ابن حجر عسقلانی نے حدیث کے روایت کرنے میں اس شخص کو 'صدوق' کا درجہ عطا فرمایا ہے دیکھئے امام ابن حجر کی کتاب 'تقریب التھذیب'  ص 718 ترجمہ نمبر 4937
 



جبکہ اہل ِسنت کے ایک اور امام عجلی نے تو اس دشمن ِحسین کی سچائی اور ایمانداری پر ابن حجر عسقلانی سے بڑھ کر اپنے اطمنان کا اظہار کیا ہے۔ کتاب 'میزان الاعتدال' ج 5 ص 239 میں عمر بن سعد کے متعلق امام عجلی کا قول یوں نقل کیا ہے: وہ تابعی ہیں، ثقہ ہیں
 


 

امام ِاہل ِسنت ذہبی کتاب 'میزان الاعتدال' ج 5 ص 238-239میں عمر بن سعد کے متعلق لکھتے ہیں:
هو في نفسه غير متهم
ذاتی طور پر ان کوئی میں نقص نہیں




اس لعنتی انسان کی روایت کردہ احادیث مذہب ِاہل ِسنت کی بلند درجہ کتاب 'مسند احمد بن حنبل' میں موجود ہیں اور اہل ِسنت اور خاص طور پر سلفی و وہابی مذہب کے عالم ِدین شیخ شعیب الارنئووط نے کتاب 'مسند احمد بن حنبل' کے حاشیہ میں ان احادیث کو 'حسن' کا درجہ دیا ہے جن کی سند میں یہ منافق دشمن ِ اہل ِبیت موجود ہے۔
1۔ مسند احمد ، ج 1 ص 82 حدیث 1487
2۔ مسند احمد ، ج 1 ص 113 حدیث 1531
3۔ مسند احمد ، ج 1 ص 142 حدیث 1575






اسی طرح اہل ِسنت کے نامور اسکالر شیخ احمد شاکر نے بھی کتاب 'مسند احمد' کا حاشیہ تحریر کیا ہے اورعمر بن سعد کی ایک حدیث کو 'صحیح' قرار دیا ھے، دیکھئے مسند احمد، ج 3 ص 51۔ اسی طرح امام ابن حجر عسقلانی نے ایک حدیث جس کا راوی عمر بن سعد ھے اسے 'حسن' قرار دیا ھے ، دیکھئے ھدایت الروات، ج 2 ص 229۔کم از کم یہاں سے تو سپاہ صحابہ اور ان جیسے دیگر ناصبیوں کو یہ بات معلوم ہوجانا چاہیئے ہے کہ امام حسین (ع) کا قتل ان کے ناصبی باپ داداؤں نے ہی انجام دیا تھا۔ تمہارے سلف بزرگوں نے اُنہی قاتلوں کا اتباع کیا اور انہیں اپنے مذھب میں ایک ا علی مقام دیا جیسا کہ وہ حدیث کے راوی ہونے کی حیثیت سے اُن کو معتبر اور معزز شخصیات تسلیم کرتے تھے۔

Download Post pdf
نام

ابن ابی حدید,2,ابنِ تیمیہ,8,ابن جریر طبری شیعہ,1,ابن حجر مکی,2,ابن خلدون,1,ابن ملجم لعین,1,ابو یوسف,1,ابوسفیان,1,ابومخنف,1,اجماع,2,احمد بن محمد عبدربہ,1,اعلی حضرت احمد رضا خان بریلوی,7,افطاری کا وقت,1,اللہ,4,ام المومنین ام سلمہ سلام علیھا,2,امام ابن جوزی,1,امام ابو زید المروزی,1,امام ابوجعفر الوارق الطحاوی,2,امام ابوحنیفہ,17,امام احمد بن حنبل,1,امام الزھبی,2,امام بخاری,1,امام جعفر صادق علیہ السلام,3,امام حسن علیہ السلام,11,امام حسین علیہ السلام,21,امام شافعی,5,امام علی رضا علیہ السلام,1,امام غزالی,3,امام مالک,3,امام محمد,1,امام مہدی عج,5,امامت,4,امداد اللہ مکی,1,اہل بیت علیھم السلام,2,اہل حدیث,16,اہل قبلہ,1,آذان,2,آن لائن کتابوں کا مطالعہ,23,آیت تطہیر,1,بریلوی,29,بریلوی اور اولیاء اللہ کے حالات,2,بنو امیہ,2,تبرا,8,تحریف قرآن,6,تراویح,2,تقابل ادیان و مسالک,33,تقيہ,2,تکفیر,3,جنازہ رسول اللہ,1,جنگ جمل,4,جنگ صفین,1,حافظ مبشر حسین لاہوری,1,حدیث ثقلین,5,حدیث طیر,1,حدیث غدیر,7,حدیث قرطاس,1,حضرت ابن عباس رض,3,حضرت ابو طالب علیہ السلام,5,حضرت ابوبکر,20,حضرت ابوزر غفاری رض,1,حضرت ام اکلثوم سلام علیھا,2,حضرت خدیجہ سلام علھیا,1,حضرت عائشہ بنت ابوبکر,14,حضرت عثمان بن عفان,7,حضرت علی علیہ السلام,64,حضرت عمار بن یاسر رض,3,حضرت عمر بن خطاب,23,حضرت عیسیٰ علیہ السلام,4,حضرت فاطمہ سلام علیھا,16,حضرت مریم سلام علیھا,1,حضرت موسیٰ علیہ السلام,2,حفصہ بنت عمر,1,حلالہ,1,خارجی,2,خالد بن ولید,1,خلافت,10,دورود,1,دیوبند,55,رافضی,3,رجال,5,رشید احمد گنگوہی,1,روزہ,3,زبیر علی زئی,7,زنا,1,زیاد,1,زیارات قبور,1,زيارت,1,سب و شتم,2,سجدہ گاہ,3,سرور کونین حضرت محمد ﷺ,14,سلیمان بن خوجہ ابراہیم حنفی نقشبندی,1,سلیمان بن عبد الوہاب,1,سنی کتابوں سے سکین پیجز,284,سنی کتب,6,سولات / جوابات,7,سیرت معصومین علیھم السلام,2,شاعر مشرق محمد اقبال,2,شاعری کتب,2,شجرہ خبیثہ,1,شرک,8,شفاعت,1,شمر ابن ذی الجوشن لعین,2,شیخ احمد دیوبندی,3,شیخ عبدالقادرجیلانی,1,شیخ مفید رح,1,شیعہ,8,شیعہ تحریریں,8,شیعہ عقائد,1,شیعہ کتب,18,شیعہ مسلمان ہیں,5,صحابہ,18,صحابہ پر سب و شتم,1,صحیح بخاری,5,صحیح مسلم,1,ضعیف روایات,7,طلحہ,1,عبادات,3,عبدالحق محدث دہلوی,1,عبداللہ ابن سبا,1,عبدالوہاب نجدی,2,عرفان شاہ بریلوی,1,عزاداری,4,علامہ بدرالدین عینی حنفی,1,علمی تحریریں,76,علیہ السلام لگانا,1,عمامہ,1,عمر بن سعد بن ابی وقاص,1,عمران بن حطان خارجی,2,عمرو بن العاص,3,غزوہ احد,1,غم منانا,12,فتویٰ,4,فدک,3,فقہی مسائل,17,فیض عالم صدیقی ناصبی,1,قاتلان امام حسینؑ کا مذہب,6,قاتلان عثمان بن عفان,1,قادیانی,3,قادیانی مذہب کی حقیقت,32,قرآن,5,کالا علم,1,کتابوں میں تحریف,5,کلمہ,2,لفظ شیعہ,2,ماتم,3,مباہلہ,1,متعہ,4,مرزا بشیر احمد قادیانی,2,مرزا حیرت دہلوی,2,مرزا غلام احمد قادیانی,28,مرزا محمود احمد,2,مسئلہ تفضیل,3,معاویہ بن سفیان,25,مغیرہ,1,منافق,1,مولانا عامر عثمانی,1,مولانا وحید الزماں,3,ناصبی,22,ناصر الدین البانی,1,نبوت,1,نماز,5,نماز جنازہ,2,نواصب کے اعتراضات کے جواب,72,واقعہ حرا,1,وسلیہ و تبرک,2,وصی رسول اللہ,1,وضو,3,وہابی,2,یزید لعنتی,14,یوسف کنجی,1,Requests,1,
rtl
item
شیعہ اہل حق ہیں: عمر بن سعد بن ابی وقاص اور سنی علماء
عمر بن سعد بن ابی وقاص اور سنی علماء
عمر بن سعد بن ابی وقاص اور سنی علماء اھل ِسنت کے علماء میں ایک نامور اور معتبر نام امام ذہبی جو عمر ابن سعد کے بارے میں تحریر کرتے ہیں: ابن سعد نے اُس فوج کی قیادت کی جس نے الحسین کو قتل کیا، مختار انے ابن سعد کو قتل کیا سیرا علام النبلاء ، ج 4 ص 349 اہلِ سنت کے امام ابن حجر عسقلانی نے اپنی کتاب تھذیب التھذیب میں حدیث کے حوالنے سے عمر ابن سعد کی مذھبی اہمیت بیان کرتے ہوئے لکھتے ہیں: عمر ابن سعد بن ابی وقاص زہری ابو حفص مدنی کوفہ میں رہے۔ انہوں نے اپنے والد اور سعید الخدری سے روایت کیں ہیں ۔ ان کے بیٹے ابراہیم ، پوتے ابو بکر حفص، ابو اسحاق سبیعی، عزار بن حریث ، یزید بن ابی مریم ، قتادہ ،زہری ، یزید بن حبیب اور دوسروں نے بھی ان سے روایت کی ہیں۔ تھذیب التھذیب ، ج 7 ص 450 ۔ 452 جہاں تک اہل ِسنت کی اس بزرگ ہستی کی سچائی کا تعلق ہے، تو امام ابن حجر عسقلانی نے حدیث کے روایت کرنے میں اس شخص کو 'صدوق' کا درجہ عطا فرمایا ہے دیکھئے امام ابن حجر کی کتاب 'تقریب التھذیب' ص 718 ترجمہ نمبر 4937 جبکہ اہل ِسنت کے ایک اور امام عجلی نے تو اس دشمن ِحسین کی سچائی اور ایمانداری پر ابن حجر عسقلانی سے بڑھ کر اپنے اطمنان کا اظہار کیا ہے۔ کتاب 'میزان الاعتدال' ج 5 ص 239 میں عمر بن سعد کے متعلق امام عجلی کا قول یوں نقل کیا ہے: وہ تابعی ہیں، ثقہ ہیں امام ِاہل ِسنت ذہبی کتاب 'میزان الاعتدال' ج 5 ص 238-239میں عمر بن سعد کے متعلق لکھتے ہیں: هو في نفسه غير متهم ذاتی طور پر ان کوئی میں نقص نہیں اس لعنتی انسان کی روایت کردہ احادیث مذہب ِاہل ِسنت کی بلند درجہ کتاب 'مسند احمد بن حنبل' میں موجود ہیں اور اہل ِسنت اور خاص طور پر سلفی و وہابی مذہب کے عالم ِدین شیخ شعیب الارنئووط نے کتاب 'مسند احمد بن حنبل' کے حاشیہ میں ان احادیث کو 'حسن' کا درجہ دیا ہے جن کی سند میں یہ منافق دشمن ِ اہل ِبیت موجود ہے۔ 1۔ مسند احمد ، ج 1 ص 82 حدیث 1487 2۔ مسند احمد ، ج 1 ص 113 حدیث 1531 3۔ مسند احمد ، ج 1 ص 142 حدیث 1575
http://4.bp.blogspot.com/-n6AbXRSWtCA/U8-DRG3xQRI/AAAAAAAACrM/oL3X0yeL6yo/s1600/07_1516_0000.jpg
http://4.bp.blogspot.com/-n6AbXRSWtCA/U8-DRG3xQRI/AAAAAAAACrM/oL3X0yeL6yo/s72-c/07_1516_0000.jpg
شیعہ اہل حق ہیں
https://www.shiatiger.com/2014/07/umar-ibne-saad-la.html
https://www.shiatiger.com/
https://www.shiatiger.com/
https://www.shiatiger.com/2014/07/umar-ibne-saad-la.html
true
7953004830004174332
UTF-8
تمام تحریرں دیکھیں کسی تحریر میں موجود نہیں تمام دیکھیں مزید مطالعہ کریں تبصرہ لکھیں تبصرہ حذف کریں ڈیلیٹ By مرکزی صفحہ صفحات تحریریں تمام دیکھیں چند مزید تحریرں عنوان ARCHIVE تلاش کریں تمام تحریرں ایسی تحریر موجود نہیں ہے واپس مرکزی صفحہ پر جائیں Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content