مس الذکر اور صحت نماز کا مسئلہ


 ناظرین اہل اسلام کے ہاں یہ مسئلہ قابل نقاش بنا ہوا ہے کہ کیا انسان اگر اپنی شرمگاہ کو ہاتھ لگائے تو اس کا وضو ٹوٹ جائے گا یا نہیں، اس حوالے سے اہل اسلام کے ہاں مختلف آراء پائی جاتی ہیں، کچھ مطلقا اس کو مبطل وضو قرار دیتے ہے اور کچھ مطلقا اس کو عدم مبطل قرار دیتے ہے، پھر جو مبطل وضو قرار دیتے ہے ان میں دو آراء ہیں آیا شہوت کے ساتھ کو ہاتھ لگانے سے ہوگا یا بغیر شہوت کے بھی اس حکم کا اجرا ہوگا، غرض یہ کہ اہل اسلام کے ہاں مختلف رائے ہیں۔ فقہ جعفریہ (شیعہ) میں اگر کوئی شخص اپنی شرمگاہ کو ہاتھ لگائے تو اس کا وضو نہیں ٹوٹتا اور جب وضو نہیں ٹوٹتا تو نماز بھی باقی رہتی ہے اگر دوران نماز ہو۔ اب آتے ہے اصل مسئلہ کی جانب۔
ایک بھائی نے مجھے تہذیب الاحکام سے ایک روایت بھیجی جو کچھ یوں تھی:
الحسين بن سعيد عن فضالة عن معاوية بن عمار قال: سألت أبا عبد الله (ع) عن الرجل يعبث بذكره في الصلاة المكتوبة؟ فقال: لا بأس.
راوی معاویہ بن عمار امام صادق ع سے دریافت کرتے ہے کہ آیا ایک شخص جو اپنی فرض نماز میں اپنی شرمگاہ کے ساتھ تلعب (کھیلے) کرے تو اس کی نماز کا کیا حکم ہے؟ امام جواب دیتے ہے کہ اس کی نماز میں مسئلہ نہیں۔
حوالہ: الاستبصار جلد ١ ص ٨٨ و تہذیب الاحکام جلد ١ ص ٣٤٦
تبصرہ: ادھر گویا یہ تاثر دیا گیا کہ دیکھو شیعوں میں کیسی نماز ادا کی جاتی ہے گویا ان کے ہاں شرمگاہ سے کھیلو اور نماز پھر بھی صحیح تو ذھن میں رہے کہ ایک ادائے نماز کا معاملہ ہوتا ہے اور ایک کمال نماز کا،، تو اجزائے نماز کے عنوان سے اگر کوئی شخص اپنی شرمگاہ کو ہاتھ لگائے کھجلائے یا آنکھیں قبلہ رخ اوپر نیچی کرے تو اگرچہ یہ خشوع نماز اور کمال نماز کے بالکل برخلاف تو ہے تو لیکن پھر بھی اس کی نماز کو ادا کے عنوان سے صحیح مانا جائے گا اگرچہ قبولیت نماز کے عنوان سے سوال کیا جاسکتا ہے۔ تو جو جس چیز کا محل ہو اس کو ویسے ہی دیکھنا چاہئے، اور ادائے وجوب اور کمال نماز میں فرق کو ذھن میں رکھنا چاہئے۔
اب اگر آپ شوکانی کی عبارت کو دیکھئے تو وہ اس پر بحث کرتے ہے کہ آیا شرمگاہ کو چھونے مبطل وضو ہے یا نہیں، فرماتے ہے:
وذهب علي عليه السلام وابن مسعود وعمار والحسن البصري وربيعة والعترة والثوري وأبو حنيفة وأصحابه وغيرهم إلى أنه غير ناقض . وقد ذكر الحازمي في الاعتبار جماعة من القائلين بهذه المقالة ، وجماعة من القائلين بالمقالة الأولى من الصحابة والتابعين لم نذكرهم هنا فليرجع إليه واحتج الآخرون بحديث طلق بن علي عند أبي داود والترمذي والنسائي وابن ماجه وأحمد والدارقطني مرفوعا بلفظ : { الرجل يمس ذكره أعليه وضوء ؟ فقال صلى الله عليه وسلم : إنما هو بضعة منك } ، وصححه عمرو بن علي الفلاس وقال : هو عندنا أثبت من حديث بسرة .
امام علی علیہ السلام، ابن مسعود، عمار، حسن البصری، ربیعہ، عترت اہلبیت ع، سفیان ثوری، ابو حنیفہ اور ان کے ساتھ کے بقول شرمگاہ کو چھونا مبطل وضو نہیں، حازمی نے اپنی کتاب الاعتبار میں ایک جماعت علماء سے نقل کیا ہے جو اس کو وضو کا مبطل نہیں مانتے اور ان کا ذکر بھی کیا ہے صحابہ اور تابعین میں سے جن کا ہم نے ذکر نہیں کیا جو اس کو وضو کا مبطل مانتی تھی، تو اس طرف رجوع کیجئے اور جو حضرات اس کو وضو کا مبطل نہیں مانتے انہوں نے طلق بن علی کی روایت سے استدلال کیا ہے جس کو ترمذی، نسائی، ابن ماجہ، احمد اور دار القطنی نے مرفوعا ان الفاظ کے ساتھ نقل کیا کہ اگر ایک شخص اپنی شرمگاہ کو چھوئے تو کیا اس پر وضو ہے؟ تو رسول ص نے جواب دیا شرمگاہ اس کے جسم کا ٹکڑا ہے (تو اس کو چھونے سے وضو کیسا؟) عمرو بن علی الفلاس نے اس روایت کو صحیح کہا اور کہا کہ یہ ہمارے نزدیک بسرہ کی حدیث (جو مبطل وضو قرار دیتی ہے) سے زیادہ ثابت شدہ ہے۔
حوالہ: نیل الاوطار جلد ٢ ص ٢٣٥-٢٣٧
چنانچہ ثابت ہوا کہ رسول ص کی ایک روایت کے مطابق، اور خود امیر المؤمنین ع اور عترت اہلبیت علیھم السلام کے مطابق شرمگاہ کو ہاتھ لگانا مبطل وضو نہیں تو جب یہ مبطل وضو نہیں تو نماز کے دوران اگر کوئی چھیڑ چھاڑ کرے تو فقہی عنوان سے اس کی نماز کو باطل نہیں کہا جائے گا اگرچہ اس کو ایسا کرنا یقینا خضوع و خشوع کے منافی ہے، امام ع کا کسی چیز کا فقہی عنوان سے صحیح کہنا اس کو مجزی تو قرار دے سکتا ہے لیکن وہ چیز ضروری نہیں مستحسن بھی ہو۔ کتنی ہی مکروہ چیزیں ایسی ہیں جن کے بارے میں حکم تو یہ لگے گا کہ ان کے کرنے میں کوئی مانع نہیں لیکن اصلا ان کی کراہیت تو پھر بھی باقی رہتی ہے۔
اب ہم یہی سوال آپ سے پوچھتے ہیں کہ جو حضرات مس الذکر یعنی شرمگاہ کو چھونا وضو کے ٹوٹنے کا باعث نہیں سمجھتے، کیا اگر کوئی شخص نماز میں چھیڑم چھاڑی کرے اور ایسا کرنا عمل کثیر کے ضمرے میں نہ ہو تو کیا اس کی نماز کو باطل کہا جائے گا یا نہیں؟ جو جواب آپ کے مفتی صاحبان کا ہوگا وہی ہمارا سمجھئے۔
خیر طلب
 





تبصرے

نام

ابن ابی حدید,2,ابنِ تیمیہ,8,ابن جریر طبری شیعہ,1,ابن حجر مکی,2,ابن خلدون,1,ابن ملجم لعین,1,ابو یوسف,1,ابوسفیان,1,ابومخنف,1,اجماع,2,احمد بن محمد عبدربہ,1,اعلی حضرت احمد رضا خان بریلوی,7,افطاری کا وقت,1,اللہ,4,ام المومنین ام سلمہ سلام علیھا,2,امام ابن جوزی,1,امام ابو زید المروزی,1,امام ابوجعفر الوارق الطحاوی,2,امام ابوحنیفہ,17,امام احمد بن حنبل,1,امام الزھبی,2,امام بخاری,1,امام جعفر صادق علیہ السلام,3,امام حسن علیہ السلام,11,امام حسین علیہ السلام,21,امام شافعی,5,امام علی رضا علیہ السلام,1,امام غزالی,3,امام مالک,3,امام محمد,1,امام مہدی عج,5,امامت,4,امداد اللہ مکی,1,اہل بیت علیھم السلام,2,اہل حدیث,16,اہل قبلہ,1,آذان,2,آن لائن کتابوں کا مطالعہ,23,آیت تطہیر,1,بریلوی,29,بریلوی اور اولیاء اللہ کے حالات,2,بنو امیہ,2,تبرا,8,تحریف قرآن,6,تراویح,2,تقابل ادیان و مسالک,33,تقيہ,2,تکفیر,3,جنازہ رسول اللہ,1,جنگ جمل,4,جنگ صفین,1,حافظ مبشر حسین لاہوری,1,حدیث ثقلین,5,حدیث طیر,1,حدیث غدیر,7,حدیث قرطاس,1,حضرت ابن عباس رض,3,حضرت ابو طالب علیہ السلام,5,حضرت ابوبکر,20,حضرت ابوزر غفاری رض,1,حضرت ام اکلثوم سلام علیھا,2,حضرت خدیجہ سلام علھیا,1,حضرت عائشہ بنت ابوبکر,14,حضرت عثمان بن عفان,7,حضرت علی علیہ السلام,64,حضرت عمار بن یاسر رض,3,حضرت عمر بن خطاب,23,حضرت عیسیٰ علیہ السلام,4,حضرت فاطمہ سلام علیھا,16,حضرت مریم سلام علیھا,1,حضرت موسیٰ علیہ السلام,2,حفصہ بنت عمر,1,حلالہ,1,خارجی,2,خالد بن ولید,1,خلافت,10,دورود,1,دیوبند,55,رافضی,3,رجال,5,رشید احمد گنگوہی,1,روزہ,3,زبیر علی زئی,7,زنا,1,زیاد,1,زیارات قبور,1,زيارت,1,سب و شتم,2,سجدہ گاہ,3,سرور کونین حضرت محمد ﷺ,14,سلیمان بن خوجہ ابراہیم حنفی نقشبندی,1,سلیمان بن عبد الوہاب,1,سنی کتابوں سے سکین پیجز,284,سنی کتب,6,سولات / جوابات,7,سیرت معصومین علیھم السلام,2,شاعر مشرق محمد اقبال,2,شاعری کتب,2,شجرہ خبیثہ,1,شرک,8,شفاعت,1,شمر ابن ذی الجوشن لعین,2,شیخ احمد دیوبندی,3,شیخ عبدالقادرجیلانی,1,شیخ مفید رح,1,شیعہ,8,شیعہ تحریریں,8,شیعہ عقائد,1,شیعہ کتب,18,شیعہ مسلمان ہیں,5,صحابہ,18,صحابہ پر سب و شتم,1,صحیح بخاری,5,صحیح مسلم,1,ضعیف روایات,7,طلحہ,1,عبادات,3,عبدالحق محدث دہلوی,1,عبداللہ ابن سبا,1,عبدالوہاب نجدی,2,عرفان شاہ بریلوی,1,عزاداری,4,علامہ بدرالدین عینی حنفی,1,علمی تحریریں,76,علیہ السلام لگانا,1,عمامہ,1,عمر بن سعد بن ابی وقاص,1,عمران بن حطان خارجی,2,عمرو بن العاص,3,غزوہ احد,1,غم منانا,12,فتویٰ,4,فدک,3,فقہی مسائل,17,فیض عالم صدیقی ناصبی,1,قاتلان امام حسینؑ کا مذہب,6,قاتلان عثمان بن عفان,1,قادیانی,3,قادیانی مذہب کی حقیقت,32,قرآن,5,کالا علم,1,کتابوں میں تحریف,5,کلمہ,2,لفظ شیعہ,2,ماتم,3,مباہلہ,1,متعہ,4,مرزا بشیر احمد قادیانی,2,مرزا حیرت دہلوی,2,مرزا غلام احمد قادیانی,28,مرزا محمود احمد,2,مسئلہ تفضیل,3,معاویہ بن سفیان,25,مغیرہ,1,منافق,1,مولانا عامر عثمانی,1,مولانا وحید الزماں,3,ناصبی,22,ناصر الدین البانی,1,نبوت,1,نماز,5,نماز جنازہ,2,نواصب کے اعتراضات کے جواب,71,واقعہ حرا,1,وسلیہ و تبرک,2,وصی رسول اللہ,1,وضو,3,وہابی,2,یزید لعنتی,14,یوسف کنجی,1,Requests,1,
rtl
item
شیعہ اہل حق ہیں: مس الذکر اور صحت نماز کا مسئلہ
مس الذکر اور صحت نماز کا مسئلہ
الحسين بن سعيد عن فضالة عن معاوية بن عمار قال: سألت أبا عبد الله (ع) عن الرجل يعبث بذكره في الصلاة المكتوبة؟ فقال: لا بأس. راوی معاویہ بن عمار امام صادق ع سے دریافت کرتے ہے کہ آیا ایک شخص جو اپنی فرض نماز میں اپنی شرمگاہ کے ساتھ تلعب (کھیلے) کرے تو اس کی نماز کا کیا حکم ہے؟ امام جواب دیتے ہے کہ اس کی نماز میں مسئلہ نہیں۔ حوالہ: الاستبصار جلد ١ ص ٨٨ و تہذیب الاحکام جلد ١ ص ٣٤٦
https://4.bp.blogspot.com/-Lhoft8LwvTY/XJWnLLuZKzI/AAAAAAAAIeQ/JCwm3pEqL7k3Ig_AMuSKfPl42uEH3IHMQCLcBGAs/s640/Nel%2B2%2B0.jpg
https://4.bp.blogspot.com/-Lhoft8LwvTY/XJWnLLuZKzI/AAAAAAAAIeQ/JCwm3pEqL7k3Ig_AMuSKfPl42uEH3IHMQCLcBGAs/s72-c/Nel%2B2%2B0.jpg
شیعہ اہل حق ہیں
https://www.shiatiger.com/2019/03/namaz.html
https://www.shiatiger.com/
https://www.shiatiger.com/
https://www.shiatiger.com/2019/03/namaz.html
true
7953004830004174332
UTF-8
تمام تحریرں دیکھیں کسی تحریر میں موجود نہیں تمام دیکھیں مزید مطالعہ کریں تبصرہ لکھیں تبصرہ حذف کریں ڈیلیٹ By مرکزی صفحہ صفحات تحریریں تمام دیکھیں چند مزید تحریرں عنوان ARCHIVE تلاش کریں تمام تحریرں ایسی تحریر موجود نہیں ہے واپس مرکزی صفحہ پر جائیں Sunday Monday Tuesday Wednesday Thursday Friday Saturday Sun Mon Tue Wed Thu Fri Sat January February March April May June July August September October November December Jan Feb Mar Apr May Jun Jul Aug Sep Oct Nov Dec just now 1 minute ago $$1$$ minutes ago 1 hour ago $$1$$ hours ago Yesterday $$1$$ days ago $$1$$ weeks ago more than 5 weeks ago Followers Follow THIS PREMIUM CONTENT IS LOCKED STEP 1: Share to a social network STEP 2: Click the link on your social network Copy All Code Select All Code All codes were copied to your clipboard Can not copy the codes / texts, please press [CTRL]+[C] (or CMD+C with Mac) to copy Table of Content